*/?>
*/?>

Farmodh e Patras (فرمُودہٴ پطرس)

فرمُودہٴ پطرس
اے حسن تو زیاد تماشہ کنم ترا
عمرم دراز بادِ تمنا کنم ترا
برھم نظر مکن من ناکردہ کار را
گر التجائے بوسہٴ بے جاکنم ترا

بہ تبسّم چہ تسلّی بہ نگا ہے چہ قرار
لشکر آرزوئے از لبم انگیختہ
برسر خاکِ من تشنہ لبے ریختہ باد
قطرہٴ مے کہ تو از لغزشِ پا ریختہ
 

(کاروان)

* * *